کابلی والا درد کادارو تصویر بلی کا بچہ بھولا بولو پان شاپ پہاڑی کوّا تک شک تُلا دَان جہلم اور تارو چشمِ بَد دُور آخری آدمی آپا آنندی اپنے دُکھ مجھے دے دو بلاؤز عید گاہ گڈریا گنڈاسا آنر کلنگ ائیر فریشنر تھرڈ ورلڈ گَرل تھرڈ ڈائمنشن ریورس گیئر انصاف راجہ کا محل آب حیات آنر کلنگ امداد زلزلہ واپسی کریڈٹ کارڈ خوابوں کا تاجر دائمی جہیز نوکری چوراہے والا بھکاری احساس آخری خواہش غلطی اپنے دکھ مجھے دے دو موت کا پیغام بھاری چیز کیا !!! نن۔۔۔ نہیں چاہے کچھ ہو جائے عمارت کا مجرم کیسی آگ جال روپ خبر ہونے تک آئینے میں وی آئی پی کارڈ شو پیس عورت اور ماں آن زبان اور جان آتشی مخلوق جنگی قبرستان اب بس کرو ماں گیارہواں کمّی کنگن ماکھے ابابیلیں ادھوری کہانی بھانبھڑ مورکھا انتظار ایک صدی کے بعد بلوندر کی بلی تبدیلی مکرم درزی شہزادی کرشنا پنشن صدر محترم ہیں خواب میں ہنوز زیرو آور کھڑکی سے باہر سورج دستخط اجنبی دہشت گرد غلام سگرٹ کی بو آئینے میں قید لڑکی ستاروں سے آگے پرواز کے بعد عزت فریادی ۔۔۔۔۔اور اندھیرا پردیسی فریاد میں ایک طوائف وہ ریت کا گھر گڑیا رانی کی خاموشی بہادر فوجی خالی الذہن آدمی ایک عاشق کی ڈائری دوسری مرغی آگ زندگی ہذیان جیسے کو تیسا پتھر کی دنیا میں سفید پوش بےبس لوگ کہانی سننے والا کثبان سرگوشی تماشہ شر ایک گمنام راستہ بھگوان دیکھتا ہے ایک کہانی تباہی کی رات کی دلہن کہانی ایک شہزادی کی اُکتایا ہوا آدمی ودائی کورا کاغذ شعور حقیقت جب میری تمہیں تلاش ہو قیامت کہانی کار انگلیاں یقین اور تجربہ فقیر بیس سال بعد کمزور انسان ایک دنیا میرے اندر جاگتی ہے اللہ کے بندے ماضی باطنی دنیا بےخوابی نشانی بے حس مرد مسافر The Break down اکیلا گھر ایک چھوٹے سے گاؤں کی کہانی دو لمحوں کے خواب اندھیروں کی کہانی بے حقیقت اللہ مسبب الاسباب ہے آشنا لمحوں کے بیچ اجنبی مسافر میلا کپڑا ایک تصویر تکون ایک محبت کی کہانی گاڑی چلانے والا کتا اور جارج کی بیوی الاؤ کھویا ہوا آدمی نیند سے پہلے کا ایک گھنٹہ چلو اور سمندر مقدس قبروں کے مجاور شیشے بیچنے والا عفریت ایک مچھیرا جو بہت زیادہ جانتا تھا پرائے راستے اور اپنے ہم سفر وصیت سبز رات ناک حلال نشہ اصلی شہد موت کا تختہ وقت ختم ایر کارگو دولتمند دوستی کی خاطر پارس پتھر حور کا بچہ ایمر جینسی لائٹ ریشم کی ڈوری نوری پروانے کی موت میاں فضلو کی نوکری چاند تارہ ریا کاری کا انعام انتظار۔۔ تیرا آج بھی ہے تار یک را ہوں کے مسا فر گمشدہ منزل کرب مسلسل رانگ نمبر شہ اور مات بدلتا ہے رنگ آسماں کیسے کیسے وقت کی کروٹ اور ہم غبار دیکھتے رہے پیاسی شبنم فیصلے کی رات مکافات عمل نا مراد شام غم کی قسم قا تل مسیحا پشیمان آرزو صدیوں نے سزا پائی طوفان کے بعد کشمکش زندگی کے رنگ سمٹ گئے فاصلے اندھیرے اجالے کاغذ کی کشتی ہر شب کی سحر ہو جاتی ہے جہاں اور بھی ہیں سَراب پھولوں کی چبھن بلا عنوان آب گزیدے آگ بیٹا ایک کہانی سنو بلیک آوٹ چارہ گری دو بیل گھنی چھاؤں کب صبح ہو گی مشکوک مہربانی مودی جیت گیا روگ شہر بدر زیست خاور چودھری کرپٹ ونڈوز بوڑھا درخت میں دقیانوسیت سانسوں کی مالا ہیروں کا سوداگر عکس در عکس IMPOSTOR گُم راہ پرانا منظر روبوٹ کشکول جھوٹی کہانی چیخوں میں دبی آواز زہر آزادی ایک ادنیٰ سا حادثہ ایک دن وہ بھی! ایک جہاں بے چارے لوگ ڈھلتے سائے حمدا آئی وَری ٹاور کوئی اُمّید کوئی تمنّا معمولی سی بات مَدفون زندہ مٹّی دَاغ داغ اُجالے پربت گھاٹی پھرفضامُسکرانے لگی سانتا کلاز چشمِ بَد دُور2 چشم بد دور ٣ ہزاروں سال پہلے سنگھار کمرے میں! پشیمان ایک خط لکھنا ہے ! الف لیلہ کی ایک رات کرفیو آرڈر بیوہ کا راز مردہ عورت پہاڑی کھیت میں! ماں کی مامتا سپیرا ماں کا دل آرزو سیب کا درخت پاسپورٹ نپولین کی محبوبہ شہنائی مولسری کے پھول جدائی سرودِعشق نیچے سروں کا احتجاج لجا فیس بک کی اپسرا نامرد موت کی تمنا صلاۃ الحاجت ہمدرد ہمزاد جیت کا غم خواہش کی تتلیاں مٹی اسٹینڈ کا فنڈا رہینِ ستم ہائے روزگار چیونٹیوں کی بستی ایک پتہ…تنہا تنہا شک شک پچھتاوے خوش دامن تیرے شہر کی رونق ہائے کیا کہیے!!! د نیا ایک گورکھ دھندہ ہے گہرے پانیوں والی آنکھیں ! چھمن کا فسانہ! میں جب احسا س کے شہر میں پہنچا تو پانی کی گڑیا خوشیاں فروخت کرتی ہے وہ بے جرم مجرم خون آلود ہاتھ گھاؤ وہ بڈھا گرہن مقدس جھوٹ ایک باپ بکاؤ ہے جوگیا سلیا ہڈیوں کے الفاظ پھُلوا سُومنگلی مزدوری ٹوبہ ٹیک سنگھ سورگ میں سور برف کا گھونسلا بَرشَور کیس ہسٹری سے باہر قتل نئی الیکٹرا رُکی ہوئی زندگی چَٹاکا شاخِ اِشتہا کا لوتھ آدمی کا بکھراؤ بدلے ہوئے پیمانے! دور بین فاقہ مست حریت ! سفید حویلی کتھا کنج کا راج پاٹ لوک پرلوک بندیا دوستی دشمنی، دشمنی دوستی جیون ساتھی کبوتر خانہ ایک کہانی سچی سی حصار دھوپ چھاؤں انتخاب و آزادی سنگریزہ Peaceful Co-existence عیب دار نفس جمودی تغیر شیشے میں تصویر کھڑکی پر چڑھتی انگور کی بیل سیڑھیوں پہ روتا ہوا گھڑیال اور چوک میں ایستادہ لڑکا انگور کی بیلوں میں چھپی لڑکی جونک اور تتلیاں ایک المیے کا المیہ وہ میرا بڑا اچھا بیٹا ہے بوڑھا اور تنہائی کارنس پر رکھے گلدان میں ٹھہرا ہوا پانی انگور کی بیل میں لپٹا ہوا شہر خود کلامی ایک پتنگے نے مجھے تنہا دیکھا Causalities of Love تین محراب ایک لڑکی جو سورج مکھی نہیں تھی دو محبتوں کی کہانی سچ کے avalancheپر بھاگتے ہوئے گھوڑے سانپ اور آدمی اے ننھی تتلی تو بہت دیر سے آئی ہے نیند چھوٹے گاؤں کی بڑی کہانی جب خدا میرے کمرے میں اتر آیا بھاگتا ہوا خرگوش دلیل کی بارش میں بھیگتا مولوی تم خود غرض ہو گئی ہو گھاس کھانے والے شیر ایک شاعر تھا۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ بڑھاپا اور فرنیچر ایک گھنٹہ پہاڑوں سے اترتا ہوا پانی Being Asad Ali کالا کپڑا پہلا پیار میوٹیشن خدا کا بُت فرشتے کے آنسو PLEDGE OF ALLEGIANCE یہ کیسی بے وفائی ہے پردے جو نفرتوں کے تھے بے زمینی نسل کشی ہے انتظار شکوہ تمغۂ جُرأت بُو آوارہ خیال خود کشی! سوئے فردوس زمیں ایک سے چار وی آر گریٹ۔۔۔؟‘‘ خواب بانٹنے والی کھانے کی میز پر ایک مکالمہ مہاتما یہ کہانی نہیں ہے میٹھا پان خواہشوں کا سفر خواب کا دیا بھائی جی محرم یار پیارا منڈی دلدل بدھا کے ساتھ چائے کا ایک کپ شیطان اونٹ اور بدو خواب آور پتھر پاگل ایک ڈاکٹر کے ادھورے نوٹ چپہ بھر روٹی کا ٹکڑا وہ اک نگہ کہ بظاہر نگاہ سے کم ہے عشق مجنوں و لیلیٰ افیونی مکالمے کا قتل کوہِ ندا ایک زہریلی کہانی ایک زہریلی کہانی شال جونک گیندے کے پھول تنہائی اور تنہائی نسخہ کھلاڑی تماشہ لہو کے چراغ مہمان ریت اور چشمہ وہ آدمی کمرہ نمبر ۲۸ اجنبی تعاقب کنوارا آدمی، زمین اور آسیب کوئی آواز پھانس کِنّی کا راجکمار کینوس پر چہرے اور میں بھگت رام ایرانی پلاؤ ‫کچرا بابا خمیازہ مہا لکشمی کا پل پیاسا چھلاوے اندھا کنواں دعا استری گریباں گیر دو گز زمین کنواں، آدمی اور سمندر تمنا کیا تم نے سوچا تھا سرد ہواؤں کے موسم ہیپی مدرز ڈے دفتر میں ایک دن طیراً ابابیل فعل متعدی بستی کی آخری بدصورتی بجنگ آمد خلفشار طالبان بھوک واپسی ملال خدا کے چنیدہ بندے سنہری ٹوپیوں والے تین اجنبی روز پدر موچی بیل آئی ایس او نو ہزار پیٹر ٹھہرو! کہانی کی تلاش میں شاید…! شکستِ آبرو! ملبے میں دبے خواب پھاہا سجدہ کبوتروں والا سائیں الو کا پٹھا تلون؟ وہ خط جو پوسٹ نہ کئے گئے مصری کی ڈلی ماتمی جلسہ قبض ایکٹریس کی آنکھ نا مکمل تحریر مٹی کا سفر خود کفیل بابا بھابھی ماں آخری منی آرڈر ابا کی خاطر کم ظرف ماں کا سچ خون تمنا اپنی کلہاڑی اپنے پاؤں تیر واپس کمان میں پٹڑی سے اترتے ہوئے مجبور میں ہی نہیں کرسی پہ بیٹھی تنہائی سفید آنچل نارسائی کی مٹھیوں میں لمحہ جو صدیاں ہوا سمندر مجھے بلاتا ہے شبِ مراقبہ کے اعترافات کی کہانیاں موڑ کے دوسری طرف دیدۂ بے ربطیِ عنواں دائرہ شیشۂ دیدہ سے دور خلشِ غمزۂ خوں ریز فتادگی میں ڈولتے قدم مجال خواب دائرے سے باہر برزخ ہنوز خواب میں رات ایک اداس سی کہانی انخلاء وراثت مسیحائی اذان تریاق ۳۰ بچوں کی ماں دہشت کا ایک دِن قاتلوں کے درمیان یودھا بے جسم میزان تاریکی بے اماں سمینٹ میں دفن آدمی قربتیں ........ فاصلے دھرنا نئی صدی کا عذاب گلی گٹار سجدہ گھلتا ملتا لہو وارث آدم بو (ا+ب)۲ آسیب باگھ بگھیلی رات بند مٹھی میں جگنو بانجھ ہوا میں سانس بڑا سوال بارھیں برسیں بچھڑے ہوئے ہاتھ بھُول بوکا چاہ در چاہ چھتیں اور ستون دیمک کا گھروندہ دیوارِ گریہ دھُوپ، دھُوپ، دھُوپ دل کا بوجھ دنیا کا آخری بھوکا آدمی دو جمع دو دوپہر اور جگنو الہام انجن کے بغیر گاڑی کا مسافر گھر سے باہر ایک دن غروب ہوتی صبح ہاری ہوئی جیت جیکو پچھے جھڑ بیری ایک سائیکلو سٹائل وصیت نامہ جہاد ڈھیری کیلنڈر کالک کاشی خلا اندر خلا خواب در خواب حلال رزق تارکول ڈلی پکی سرکاری سڑک صحرا کا سینہ چیرتی نیغ سیدھی تک سیاہ لکیر کھنچی ہوئی ہے ۔ گاڑی بھاگتی جائے تو بیسیوں میل گزر رہتے ہیں پر کہیں موڑ مڑنے میں نہیں آتا، یہاں تک کہ صحرا پار ہو جاتا ہے ۔ قدرے فاصلے پر سڑک کے دائیں بائیں بے ترتیب کچے راستے نکلتے ہیں ج پہلی صف بوئے حرم چادر اور چاردیواری چوکیدار کاکا تئیس میل ریل تال کنہار کا کنارہ کنواں کود لوں؟ قندیل فیصلہ نسل جوگی مردے زندگی اس کی ماں کی ماں ساعتِ نزول گرگٹ خوف ایک عرصے بعد فردا کا فردا ہونا! اعتراف! نشے میں دھت برف پر چلتا آدمی! تنہائی کا کرب رشتوں کے بندھن دُعا فیصلہ! قسط در قسط زندگی 
رات والا اجنبی سمجھوتہ فیرنی جلا وطن غنڈہ خاک دل چوتھا آدمی دیو داسی تثلیث کفاّرہ مُردہ گاڑی چاہت کے پنکھ اُداس نسل کا آخری آدمی لمحوں کی صلیب دلِ خانہ خراب تماشا ڈھلوان رکی ہوئی آوازیں دیدۂ یعقوب خونِ صد ہزار انجم گنبدِ بے در نانی اماں پہلی تنخواہ بیدل صاحب نیکی کا بھوت کوئلہ جل بھئی راکھ کھلونے کا غم ریت کے محل دوسری موت کتبہ گلاب اور صلیب تیسرا ٹکٹ سائے کا سفر کھانا تیار ہے ختم زہر ہر کام وقت پہ ڈائری برکتوں کا مہینہ بے وفا کارخانہ آدھی آبادی یوبیانا شہید ایک شریف آدمی گلاب کی جڑ ہلمٹ زخمی کمبل ایک تھی دردانہ وشال ارجانی کی محبوبہ پورے چاند کی رات دانی تائی ایسری شہزادہ مامتا ایک طوائف کا خط امرتسر آزادی سے پہلے Smith Smith Smith Smith

خواہشوں کا سفر

ڈاکٹر نگہت نسیم


انسانوں کی کتنی ساری خواہشیں رازوں کی طرح زندگی میں ہلچل مچائے رکھتی ہیں۔ جو نہ تو کہی جا سکتی ہیں اور نہ اس کی خواہش سے رُکا جا سکتا ہے۔

          کسی کو بہت سارے شہروں میں کوئی شہر سب سے اچھا لگتا ہے۔

          کسی کے لیے بہت سارے چہروں میں کوئی چہرہ عزیز ہو تا ہے۔

          کوئی بہت سارے لمحوں میں کوئی لمحہ بھی نہیں بھولتا۔

          کسی کے ساتھ بہت سارے غموں میں کوئی غم ایک راز کی طرح چھُپی ہوئی خواہش جیسا ہر وقت ساتھ رہتا ہے۔ ایسے ہی بہت سارے شہروں میں لندن میرا SECRET FANTACYتھا۔

          بہت سارے چہروں میں سلیم بھائی کا ایک ایسا چہرہ تھا جو مجھے کبھی نہیں بھولتا تھا۔ بہت سارے لمحوں میں سچ مچ تنہا کر دینے والا لمحہ کبھی نہ بھولتا تھا۔ کئی بہت سارے غموں میں سلیم بھائی کے بچھڑ جانے کا گم مجھے برباد رکھتا تھا لیکن یہ سب ایسا تھا جس کی فقط میں خود اپنی راز دار تھی۔ ’’ کاش ‘‘ کا خواہش سے رشتہ جتنا مضبوط تھا، اتنا ہی میرا یادوں سے۔ جب ماں جی اللہ بخشے جنت نصیب ہوئی تھیں تو ان کی عمر چالیس برس تھی۔ سلیم بھائی جو اُن کے اکلوتے بیٹے تھے ، مشکل سے بائیس برس کے تھے۔ میں بیس بر س کی اور ہم سب سے چھوٹی رانی دس برس کی تھی۔ اس وقت ابا جان لندن میں ہوا کرتے تھے اور ہم سب گلبرگ لاہور میں ایک عمدہ سے گھر میں عمدہ طریقے سے رہا کرتے تھے۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ ماں جی کو کینسر ہو گیا تھا لیکن نانی اماں کہا کرتی تھیں کہ تنہائی بھی کینسر کی طرح ہو تی ہے جو بالآخر ختم کر کے ہی ختم ہوتی ہے اور میں ہمیشہ کی طرح آج بھی یہی سوچتی ہوں کہ جس طرح جدید سائنس یہ کہتی ہے کہ کینسر جین میں آتا ہے  اسی طرح تنہائی اور تنہائی پسند ہونا بھی جینز (GENES)میں ٹرانسفر ہوتا ہے۔ ماں جی کی تنہائی کچھ کچھ مجھ میں ٹرانسفر ہو گئی تھی۔ میں ہنگامہ پسند نہیں تھی مگر کبھی کبھی موڈی ہو جاتی تھی۔ مزے مزے سے باتیں کرتی رہتی ، گیت غزلیں بھی سن لیتی تھی۔ رانی کی دیکھ بھال اور اسے بہلانے کے لیے میں اس جیسا بن جایا کرتی تھی۔ یوں میں ایک دن میں ایک عمر جی لیا کرتی تھی۔ وہ ایسے کہ صبح ہوتے ہی رانی کے بچپن سے شروع کر کے رات نانی اماں کی طرح مدبر ہو جا یا کرتی تھی۔ پھر بے دم سی بے جان سو جایا کرتی۔ سونا اور مرنا بھی تو برابر ہوتا ہے۔ یوں ایک دن میں ایک عمر گزار لینے کی عادت نے مجھے تھکانا شروع کر دیا تھا لیکن سلیم بھائی کی چُپ کے قُفل نہ ٹوٹتے تھے۔ اپنے کام سے کام شاید مطلبی بھی۔ انہیں اکنامکس کی کتابیں اور اخبار کے علاوہ کچھ کام نہ تھا لیکن جانے کیوں بہن ہونے کے ناتے انہیں میں نے ایک رتبہ، ایک اعتبار، ایک حوالہ سادے رکھا تھا۔

          اُن کی چپ میں بھی ماں کا چہرہ اور باپ کی شفقت ڈھونڈا کرتی لیکن ایسی ’’گرمی‘‘ مجھے کبھی نہ ملتی۔ ایک دفعہ میں صحن دھو رہی تھی اور بے حد مگن تھی۔ نانی اماں باورچی خانے میں کوئی نئی ترکیب آزما رہی تھیں۔ رانی ٹی وی میں گم تھی۔ مجھے کام کرنے کے دوران ریڈیو سننا بہت اچھا لگتا تھا۔ جو صبح ریڈیو سیلون سے شروع ہوتا  تو شام چار بجے تک سارے اسٹیشن آزما لیے جاتے اور پھر بہلانا کسے کہتے ہیں۔ ریڈیو بھی ماں جی نے اللہ بخشے میرے ہی واسطے لیا تھا یا شاید اپنی تنہائی کے کینسر کا علاج چاہتی تھیں۔ حالانکہ ان کے کینسر کا مسیحا تو ابا جان تھے۔ ان کے وجود کی موجودگی ، ان کی باتوں کی خوشبو ، ان کے لمس کی تازگی ، ان کے حوصلے کا ٹانک کچھ بھی تو ان کے حصے میں نہ آ یا تھا اور آیا بھی تو بس پاؤنڈ اور پینیز جو روپے میں بدلتے تو لاکھوں ہو جاتے لیکن ان لاکھوں سے اماں جی کی تنہائی کا کوئی نسخہ کبھی نہ ملتا تھا۔ سو وہ گھلتے گھلتے مٹی میں مل گئیں اور ابا جان بھی لندن کے بنک بن گئے ، سو ریڈیو ٹی وی کا گھر آنا کون سی بڑی چیز تھی۔ ہوا یوں کہ میں ریڈیو پر آنے والے کسی پروگرام میں مگن تھی کہ اچانک سلیم بھائی آئے اور ریڈیو اُٹھا کر اندر لے گئے اور اپنی پسند کے اسٹیشن بدل بدل کر سننے لگے اور نانی اماں کو بلا کر کہا کہ ’’یہ ریڈیو میرا ہے۔ گڈی سے کہیں کہ اسے ہاتھ نہ لگایا کرے۔‘‘ ان کے لہجے میں سرد سی اجنبیت مجھے چونکا گئی۔ میں صحن میں کھڑی رہ گئی۔حالانکہ ان کے آنے پر میں سوچ رہی تھی کہ سلیم بھائی اپنی عمر سے کہیں زیادہ سوبر اور خوب صورت لگتے ہیں ، بالکل شہزادوں کی طرح آن بان رکھنے والے شخص کا دل بھی تنگ ہی نکلا شہزادوں کی طرح۔ اس دن میں نے خو د کو بڑی خاموشی کے ساتھ ان سے علیحدہ کر لیا۔ ان کے وجود سے جڑا میرا ہر خواب ادھورا رہ کر ختم ہو رہا تھا لیکن ایک بات کا فرق ضرور مجھے پتا لگ گیا کہ ماں جی کو رونا بے حد آسان تھا مگر سلیم بھائی کی بے اعتنائی اور بے حسی کو رونا بے حد مشکل۔ ذہنی علیحدگی کا خلا میری ساری زندگی پر محیط ہو گیا۔ ہر رات سوچنا میرا معمول بن گیا۔ کیا تھا اگر وہ مجھ سے پوچھ کر اسٹیشن بدل لیتے یا پوچھ کر ریڈیو لے جاتے۔

          اگر وہ اس دن ریڈیو نہ بھی سنتے تو کیا قیامت آ جاتی۔ چلو اگر بے خیالی میں اٹھا کر لے بھی گئے تھے تو نانی اماں سے یہ کہنے کی کیا ضرورت تھی کہ گڈی اسے ہاتھ نہ لگائے کہ یہ میرا ہے۔

          میں نے کبھی تیرا میرا نہ کیا تھا۔ ہم دونوں تو ایک ہی ماں باپ کی اولاد تھے۔ یہ ساری چیزیں ہم سب کی تھیں۔ دُکھے ہوئے بے چین زود حس، زود رنج دل کے لیے یہ خبر صدمے کی طرح ہر وقت ساتھ رہتی اور پھر سارا قصور اپنا ہی دھر لیتی کہ کاش میں یہ ریڈیو نہ سن رہی ہوتی تو شاید سلیم بھائی کی غیرت اور بے حسی پر پردہ پڑا رہتا اور ہم دونوں بہنیں بہلی رہتیں۔ شاید یہ سرد مہری انہیں ابا جان کی طرف کی طرف سے ورثے میں ملی تھی جنہیں ہم سب کی فکر تھی مگر ساتھ رہنے کا شوق نہ تھا۔ جانے کیوں انہیں اپنی تنہائی بھری زندگی میں کسی کی مداخلت پسند نہ تھی یا پھر محبت کرنے سے ڈرتے تھے۔ جو نہ ہمیں اپنے پاس لاتے تھے اور نہ ہمارے پاس خود آ تے تھے۔ جب ماں زندہ تھیں تو اتنی ہی بار آئے تھے ، جتنے ہم بہن بھائی تھے۔ لندن میں بھی وہ اکیلے رہتے تھے۔ دوسری شادی تو چھوڑ کوئی دوست وغیرہ بھی نہیں تھے۔ بس کام سے کام۔

          بھلا ایک تنہا شخص کو اپنی تنہائی کے زندہ رکھنے کے لیے کتنے کام کرنے پڑتے ہوں گے۔کتنی مصروفیت ہوتی ہو گی۔بس بچپن سے ہی لندن میراSECRET FANTACYبن گیا تھا۔ مجھے ابا جان کی خدمت سے زیادہ یہ تجسس تھا کہ آ خر ایسی کیا مصروفیت اور بہلنے کا سامان ان کے پاس ہے جو انہیں ہم سب سے بیگانہ رکھتا تھا یا پھر ایسا بے حس مزاج  انہوں نے کیوں اپنایا تھا۔ ویسے بھی پر اسرار انسان ہمیشہ مقبول رازوں کی طرح سب کوہی مزہ دیتے ہیں ، سو وہ خاندان کے ہر فر د کے فیورٹ ٹاپک کی طرح زیرِ بحث رہتے تھے۔ یوں ہمارا گھر اور اس کے طور طریقے کا ذکر خاندان تو کیا محلے کے ہر گھر میں گرم سموسے کی طرح ہاٹ فیورٹ تھا۔ میری آنکھوں میں لندن شہر کا نقشہ بس چکا تھا۔ میرے دل میں چھپی ہوئی تمنا میرے انگ انگ میں پھوٹتی تھی لیکن اس ساری کہانی میں ، میں بے خبر رہی کہ سلیم بھائی کے دل کا بھی یہی روگ تھا۔ جو بیٹھے بٹھائے لندن جانے کی سوچ ڈالی بلکہ راتوں رات عمل بھی کر لیا اور ایک دفعہ پھر ہم سب حیران و پریشان رہ گئے۔

          ’’گُڈی اور رانی کا کیا ہو گا بیٹا!‘‘نانی کا لہجہ آ زردہ ہو رہا تھا اور میں اپنے کمرے سے صاف صحن میں ہونے والی دل گرفتہ بحث سن سکتی تھی۔

          ’’میں کیا کر سکتا ہوں۔‘‘ کم گوئی اور سرد لہجے میں بڑا فرق ہوتا ہے۔ سلیم بھائی نے دونوں فرق مٹا ڈالے تھے۔ یہ کہتے ہوئے سر د بھی تھے اور اختصار سے کام لے کر اجنبیت بھی دکھا چکا تھے کہ ہم دونوں بہنوں کی اہمیت سرے سے نہیں تھی جو پاکستان جیسے ماحول میں اکیلی رہیں عزت سے یا نہیں ، انہیں کوئی سروکار نہ تھا۔

          ’’ بیٹے تم ان کی آس ہو۔ تم اس گھر کے بڑے اور باپ کی جگہ ہو !میں اکیلی جوان لڑکیوں کے ساتھ۔۔۔!‘‘ نانی اماں نے دانستہ آگے کچھ نہ کہا ہو گا یا پھر ان کا آنسوؤں سے بھیگا ہوا لہجہ آ گے نہ چل پایا ہو گا یا پھر اپنی خود داری کو مزید رُسوا نہ کیا ہو گا۔ بقول ان کے احتجاج بھی رسوا کر دیتا ہے۔ وہ ساری رات نانی اماں نے جاگ کر گزاری تھی۔ میں خود بظاہر سو رہی تھی مگر ان کی ہر کروٹ پر سینکڑوں آنسوؤں کی بارش میں بھیگتی رہی تھی۔ آنکھوں کی دل سے آنکھ مچولی کا کھیل میرے لیے نیا نہیں تھا۔ ہر طرف خاموشی تھی۔ ویرانی تھی۔ بے حسی ، غیریت ، اجنبیت کی اداسی تھی۔ اس موسم میں سلیم بھائی میرے خوابوں کے شہر لندن کے لیے اُڑ گئے لیکن وہ ابا جان کے بازوؤں میں نہیں گرے بلکہ اپنے دوست کے پاس رہنے کو ترجیح دی۔ شاید وہ بھی کوئی حد پار نہیں کرنا چاہتے تھے۔ ان کے جانے کے بعد دو فون آئے تھے۔ ایک سلیم بھائی کے خیریت سے پہنچ جانے کا ، دوسرا ابا ّ جان کا کہ ڈرنے کی ضر روت نہیں ہے۔ آ رام سے رہو میں زیادہ پیسے بھجوا دو ں گا۔ اس کا مطلب تو یہ ہوا کہ اب نانی اماں کی نوکری میں چوکی داری بھی شامل ہو گئی تھی ، سو پگار بھی بڑھ دی گئی۔ اس ساری کہانی میں نانی اماں کا کیا قصور تھا۔ جو جوان بیٹی کی لاش روزانہ اٹھاتی تھیں اور دفنا دیتی تھیں۔ میری اور رانی کی صورت جب دیکھتیں ایسا ہی کرتی ہوں گی۔ صرف مری ہوئی اکلوتی بیٹی کے رشتے سے جڑا ہر رشتہ نباہتے نباہتے کہا ں تک پہنچ گئی تھیں یا پتا نہیں شاید دنیا میں کہیں باپ اور بھائی بِکتے ہو ں گے جو ابا جان پیسے بڑھا کر بھجوانے والے تھے کہ بازار سے خرید لائیں یا پھر انگریزوں نے ہر رشتے کا طلسم ختم کر رکھا تھا۔BROKEN HOUSEکے بچوں کی طرح لا وارث سے ، سب سے ’’چچ چچ ‘‘ کی شکل میں ہمدردیاں سمیٹتے اور اُلجھ اُلجھ کر خود بھی اُلجھی ہوئی ذات کی طرح پھرنے لگے تھے لیکن ان سارے عذابوں سے میں رانی کو دور رکھنا چاہتی تھی۔ اس لیے اسے بہلاتے بہلاتے میں خود بھی بہل جاتی۔ ہم دونوں کو ہنستا دیکھ کر نانی اماں بھی مطمئن ہو جاتیں اور ہر وقت مشغول رہتیں۔ سینا پرونا ، کڑھائی کروشیا ، سویٹر سلائی ، کھانا پکانا غرض ہر کام میں طاق اور سلیقہ مند سی با وقار نانی اماں نے ہم دونوں میں کوٹ کوٹ کر سب کچھ بھر دیا تھا۔

          میں کبھی جزبز ہو تی تو ہمیشہ کہتیں۔ ’’ ہنر اور حسنِ سلوک کبھی رائیگاں نہیں جاتے۔ ایسا انسان کبھی ذلیل اور رسوا نہیں ہوتا۔ ‘‘ سر شام ہم لوگ دروازوں پر تالے ڈال کر خود کو اللہ کے حوالے کر کے ایک کمرے میں جمع ہو جاتے۔ بیچ میں رانی سوتی تھی۔ دائیں طرف نانی اماں جو دروازے کے قریب جگہ تھی۔ بائیں طرف میں ، میری جگہ کے ساتھ ہی ٹیبل تھا۔ جس پر نیشنل کا ریڈیو تھا۔ جس نے پہلی دفعہ مجھے سلیم بھائی سے ذہنی طور پر علیحدہ کر دیا تھا اور دلی طور پر قریب اور رنجیدہ تر۔ جب میں اسے دیکھتی ، سب کچھ یا د آ جاتا بلکہ بار بار آتا۔ اُن کو گئے کئی برس ہونے کو آئے تھے۔ لیکن کوئی پتہ وغیرہ ہمیں نہ مل سکا تھا البتہ ہر مہینے ابا جان کے فون اور پیسو ں سے پتہ لگتا تھا کہ وہ کہاں ہیں۔ انہوں نے ایم بی اے کر لیا تھا اور پھر شادی کر کے ہمیشہ کے لیے کینیڈا شفٹ ہو گئے تھے۔ شادی میں ابا جان تک شریک نہ ہوئے تھے اور نہ ہی بروقت اطلاع کی تھی انہوں نے۔ بہت بعد میں وہ ملنے آئے تھے اور کہنے آئے تھے کہ ایک بہت بڑی اچھی آفر پر کینیڈا جا رہے ہیں۔

          یہ خبر ہم تینوں کو ہلا گئی تھی مگر ابا جان نے اتنے سکون سے سنایا جیسے کسی جاننے والے کی اطلاع دے رہے ہیں۔

          میرے لندن کے خوابوں میں ایک اور چھپا ہوا خواب آ ملا کہ کاش ، میں سلیم بھائی کو دیکھ سکو ں۔ شاید اب وہ بھول گئے ہوں یا ہمیں یاد کرتے ہوں۔ کاش یہ سب ان کا خول ہو ، ما سک ہو جو آسانی سے جینے کے لیے پہن رکھا ہو۔ حقیقت میں وہ بہت خیال کرنے والے اور محبت کرنے والے نکلیں۔ ہائے ، میری سیکریٹ فینٹسی!! میرا ان سے تعلق ایک روگ کی طرح چمٹ گیا تھا۔ میں کسی سے کہے بغیر کسی کو بتائے بغیر انہیں اپنی عدالت میں بری کر چکی تھی اور ہمہ وقت ان کے لیے سراپا دعا بن گئی تھی۔ شاید ہر بہن ہی ایسی ہوتی ہو یا پھر میں بے وقوف تھی۔ نانی اماں مجھے ہمیشہ سمجھایا کرتیں کہ ’’سجن او جیڑا کنڈ پہچانے۔ ‘‘ یعنی اپنا وہ ہوتا ہے جو یہ جانے کہ اس کے بعد میرا اپنا کس حال میں ہے۔ سو ان کے خیال میں سلیم بھائی سجنوں کی لسٹ میں سرے سے ہی نہ آئے تھے۔ جب وہ یہاں تھے ، تب کون سی خبر رکھتے تھے۔ وہ تو ہم سب کو ہی ان کی اتنی خبر رکھنی پڑتی تھی کہ احساس ہی نہ ہوتا تھا کہ انہیں ہماری خبر ہے کہ نہیں۔ ان کی کوئی رائے نہ ہوتی تھی۔ بس حکم ہی ہوتے تھے کہ یہ ہونا ہے۔ یہ نہیں ہونا ہے۔ یہ آئے گا، یہ نہیں آئے گا۔یہ کھانا پکے تھا، یہ نہیں۔انہیں اس بات سے مطلب نہیں تھا کہ ایسا واقعی ہرگز نہیں ہونا چاہیے تھا بلکہ انہیں صرف اس بات سے مطلب تھا کہ ان کے سامنے ایسا نہیں ہونا چاہیے۔ ان کی موجودگی میں ایسے نہیں آنا چاہیے۔ جسے وہ پسند نہیں کرتے۔ آگے پیچھے چاہے جو کوئی بھی آئے۔ انہیں صرف اپنی ذات اور خواہشوں سے مطلب تھا۔ ماں جی دل برداشتہ ہو جاتی تھیں اور اکثر کہتیں تھیں۔ ’’ شکر ہے تمہارا باپ یہاں نہیں رہتا ورنہ ایک حاکم اور ہو جاتا اور دوگنی خاطر داری اور غلامی بھی ہوتی۔‘‘مگر ایک ماں کی طرح انہیں بھی آس تھی کہ وہ ان کو سمجھ لے گا لیکن جیسے ہی انہیں سمجھ آ ئی کہ جس طرح برفیلے علاقوں میں صرف ٹنڈ منڈ درخت ہی رہ جاتے ہیں ، اسی طرح ان کا بیٹا سرد لہجے کے ساتھ ٹنڈ منڈ ہی رہتا ہے۔ انہیں ان کی دعاؤں کی حدت ، میری خاموش محبت اور نانی اماں کی سرزنش بھی نہیں پگھلا سکی تھی۔ سو وہ کینسر میں کھو گئیں اور پھر چلی بھی گئیں۔ہم سب حیران ہی رہ گئے تھے کہ اتنی خاموشی سے بڑی کم عمری میں وہ رشتوں کے سارے راز و انداز سمجھ گئی تھیں جسے سمجھنے کے لیے زمانے لگتے ہیں اور ایک لمبی عمر چاہیے ہوتی ہے۔ ایسی ہی ایک عمر ہماری نانی اماں جی رہی تھیں۔ آزمانے سے لے کر نتیجے تک وہ جینا چاہتی تھیں اور میں چونکہ بے حد مثبت اور پُر امید سوچ لیے رہتی تھی جو عین میری عمر کا تقاضا بھی تھا سو ہر نئے آنے والے دن کو ایک دن پہلے ہی خواب کی طرح اپنے کنٹرول میں رکھ لیتی تھی اور نئے سرے سے خود کو نا امیدی کے لیے تیار کر لیتی تھی۔ میں ایک یقین کے ساتھ اپنی امید کی زمین پر مضبوطی کے کھڑی تھی اور کھڑی ہی رہی۔ میں آخری سانس تک سلیم بھائی کا انتظار کر سکتی تھی۔ وہ میرے بھائی تھے۔ ان کا ایک مقام ایک رتبہ تھا ،میرے دل میں۔ وہ نہ ہونے کے باوجود ہر وقت گھر میں محسوس ہوتے چلتے پھرتے۔ کبھی کبھی کچھ کہتے ہوئے۔ کبھی میں سوچتی کہ اگر وہ پُر بہار ہوتے۔ ذرا سے شوخ ہوتے۔ دلداری سے لے کر خبرداری تک کے ہنر سے واقف ہوتے تو کیا ہوتا۔ شاید ماں جی کو کینسر نہ ہوتا اور نہ میں زود رنج ہوتی۔ میں واقعی ہو بھی جاتی جو رحمان میری زندگی میں نہیں آتے۔ رحمان نانی اماں کی چوائس تھے۔ پڑھے لکھے۔۔۔ سرکاری عہدے دار۔ ابا جان آئے اور مجھے ان کے حوالے کر گئے لیکن سلیم بھائی نہیں آئے حالانکہ ابا جان بتا رہے تھے کہ انہیں اطلاع کر کے آیا ہوں۔ کتنی بار فون بھا گ بھاگ کر اٹھایا۔ پوسٹ مین کا راستہ دیکھتی رہی مگر جس طرح تعلق کی کوئی حد نہیں ہوتی ،بے تعلقی کی بھی کوئی سرحد نہیں ہوتی۔ میرے تعلق کی بھی کوئی حد نہ تھی اور سلیم بھائی کی بے تعلقی کی بھی کوئی سرحد نہ تھی۔ 

          ’’ مر و یا جیو اُن کی بلا سے۔ ‘‘رانی نے وہ سب غصے میں کہہ دیا جو میں صرف دل ہی دل میں کڑھ کر کہا کرتی تھی۔

          ’’ بری بات غصہ بزدل نکالا کرتے ہیں۔‘‘رحمان نے رانی کے سرپر ہاتھ رکھتے ہوئے ہم سب کو چونکا دیا۔

          ’’میں سوچتا ہوں ، نانی اماں کہ سلیم بھائی کو اس قدر بے حس نہیں ہونا چاہیے مگر آ پ لوگوں کو بھی داد دینی پڑتی ہے کہ سوائے ان کے حوالے سے خود کو اپ سیٹ کرنے کے کوئی اور کام  ہی نہیں ہے۔ خدا جانے وہ کس حال میں ہوں گے۔ ہو سکتا ہے وہ شرمندہ بھی ہوں اور جانے وہ کیا کیا دلائل دے رہے تھے اور میرا دل جانتا تھا بڑے یقین کے ساتھ کہ ہم سب ان کا دل رکھنے کے لیے سر ہلا کر اپنی بے وقوفی کا اعلان کر رہے تھے یا پھر رحمان ہی کا دل رکھنے کے لیے مسکرا رہے تھے اور آئے ہوئے آنسوؤں کو گرنے سے بار بار بچا رہے تھے۔ ہمارے گھر میں پہلا فرد اس طرح کا آ گیا تھا جس کے محور پر ہم تین عورتیں گھومتی تھیں اور انہوں نے کسی کو بھی مایوس نہ کیا۔

          نانی اماں کا بیٹا بن کر۔

          رانی کے بھائی بن کر۔

          میرا سب کچھ ہو کر۔۔۔!! پناہ گاہ ، تحفظ ، بر فیلی ہواؤں کی زد میں بھی رہ کر ہرا بھرا درخت میرا تھا اور صرف میرا۔۔۔!!

          ’’ کیا سوچتی رہتی ہو؟‘‘ انہوں نے انتہائی محبت سے میرے سرپر ہاتھ رکھتے ہوئے پوچھا۔

          ’’نانی اماں اور رانی اکیلی ہو گئی ہیں۔ ابا جان لندن میں تنہا رہ گئے ہیں۔ سلیم بھائی کینیڈا میں الگ رہ گئے ہیں۔ ‘‘

          ’’ اور تم میرے ساتھ تنہا رہتی ہو؟‘‘ انہوں نے میری بات مکمل کرتے ہوئے کہا۔

          تومیں بے ساختہ کہہ اٹھی۔ ’’ آ پ کے ساتھ میں ایک دنیا میں رہتی ہوں۔ تنہا ہونے کا وقت نکالنا پڑتا ہے لیکن اب سوچتی صرف یہ ہوں کہ رانی کی شادی کے بعد نانی اماں کا کیا ہو گا۔‘‘ میری آنکھوں سے جھر جھر آنسو بہہ رہے تھے۔

          ’’ہو گا؟‘‘ وہ ہمارے ساتھ رہیں گی، ہماری اماں بن کر۔‘‘ رحمان نے جیسے میرے مسائل اپنی پلکوں سے چن لیے تھے۔ میرا بس چلتا تو رُواں رُواں اپنے مہربان کے قدموں میں ڈال دیتی۔ آ دمی کا یہی رخ میری کمزوری تھا۔ بہادری سے موسموں کی سختی گرمی کو جھیلنے والا۔ ہر مسئلے کے حل والا۔ سبھی کا محافظ۔ ایک تناور درخت کی طرح خود دھوپ میں رہ کر سب کو دھوپ اور بارش سے بچانے والا انسان بجا طور پر دل میں رہنے کے لیے تھا۔ یہی روپ میری ماں کی آنکھوں میں بسا رہتا تھا۔، لیکن حسرت ان کا نصیب بنی رہتی۔ پھر ایسا ہی روپ میری نانی اماں کی آنکھوں میں ابھرا تھا،سلیم بھائی کے لیے کہ وہ ایسا ہی جواں مرد ہو گا۔ حوصلہ مند، اپنے گھر کو چھپر چھاؤں دینے والا لیکن پھر حسرت نے گھر کی چوکھٹ نہ چھوڑی۔ اب رحمان نے میری زندگی میں آ کر مجھے حسرت سے بچا لیا تھا۔ مجھے خوش نصیب بنا دیا تھا لیکن پھر بھی رات کے کسی نہ کسی پہر سب کچھ یاد آتا۔

          ادھورا گھر۔۔۔

          ادھورا بچپن۔۔۔

          ادھوری محبتیں۔۔۔

          جب اتنا کچھ ادھورا رہ گیا ہو تو پورا ہوتے ہوتے بھی عمر بیت جاتی ہے۔ شاید سب کچھ اچھا ہی رہتا جو نانی اماں فوت نہ ہو جاتیں۔ چند دنوں کی بیماری یہ رنگ لائے گی، کسے خبر تھی۔ یوں لگ رہا تھا، جیسے اب ماں چلی گئی ہو۔ ماں جی کے ساتھ سے دوگنا ساتھ ان سے ہمارا تھا۔ رحمان اگر ساتھ نہ ہوتے تو شاید یہ غم اس طرح کا نہ ہوتا کہ سنبھالا جا سکتا۔ وہ کہا کرتی تھیں کہ ،ماں تو چوکی دار ہوتی ہے ، سو ہمارا چوکی دار چلا گیا۔ یوں لگ رہا تھا، جیسے گھر کے بند دروازے کھلے رہ گئے ہوں۔ ان کی باتیں ، حکمتیں ، محبتیں ، قربانیاں کتنا کچھ یاد کرنے کو ، دہرانے کو رہ گیا تھا۔ اس دفعہ ابا جان آئے تو رانی کو ساتھ لندن لے گئے۔ جب ان کا جہاز اُڑا تومیں ایک لمحے کو اس بھرے شہر میں اکیلی رہ گئی تھی۔ کتنے دنوں تک تو مجھے ہوش ہی نہ آیا تھا۔ ہمارا گھر لمحہ لمحہ بکھر گیا تھا۔ پوری دنیا میں دھوپ بارش کی طرح سب اپنی اپنی جگہ بس رہے تھے۔ ایک بے قراری کو کہیں قرار نہ تھا۔ اسی بھاگ دوڑ میں کچھ مہینے اور گزرے تو میں اسامہ کی ماں بن گئی۔ ایک نیا تجربہ۔ ایک نئے خواب نے مجھے چونکا دیا تھا۔          

          میں بہلنے لگ گئی۔ کام صبح سے شروع ہوتے تو رات پر ختم ہو تے بلکہ ختم کرنے پڑتے۔ رانی کے خط سے پتا چلا کہ وکالت کے لیے اس نے مختلف کالجوں میں اپلائی کر دیا ہے۔ اور احتیاطاً کینیڈا میں بھی۔ اور ابا جان کے بارے میں لکھا تھا کہ وہ ہو بہو سلیم بھائی جیسے ہیں۔ اس لیے شروع میں دِقت ہوئی کہ کبھی ان کے ساتھ رہے نہیں اس لیے سمجھ بھی نہیں تھی۔ اب سب کچھ پتا لگ گیا ہے اور اب مجھے ان کی پُر اسرار سرگرمیوں سے زیادہ اپنے کیریئر کی فکر ہے۔

          ’’ دیکھا تم نے ، رانی نے جینا سیکھ لیا ہے۔ تم بھی کچھ سیکھ لو۔‘‘ رحمان نے میرا دھیان اس طرف لگاتے ہوئے کہا۔

          ’’ سیکھنا کیسا اُس کو لندن کی ہوا لگ گئی ہے۔ ویسے ابا جان کے ساتھ رہ کر اور کیا سیکھنا تھا۔‘‘ میں دل ہی دل میں اداس ہو گئی تھی۔ جانے اپنی بہن کی دوری پر یا پھر اپنی نئی تنہائی پر یا پھر رانی کی بے پروائی اچھی نہیں لگی تھی۔

          ’’آخر تم اتنی زود حس اور جذباتی کیوں ہو! تمہیں صرف اپنے گھر اور بچوں کی فکر کرنی چاہیے۔ جس طرح اور سب کرتے ہیں۔ ‘‘ رحمان کی بات میں حیران رہی گئی تھی ، وہ کیسے  تہہ در تہہ مجھ تک پہنچ جاتے تھے۔

          ’’ کوشش کروں گی۔‘‘ میں ان کے سینے سے لگی کانپ رہی تھی، رو رہی تھی ، اپنے ادھورے پن پر۔ اپنی کم مائیگی کا غم منا رہی تھی جس نے مجھے کبھی آزاد نہ رہنے دیا تھا۔ شوخی سے اڑنے نہ دیا تھا۔ کھل کر ہنسنے نہ دیا تھا۔ وہ سارا وقت جس پر رحمان اور اسامہ کا حق تھا، وہ لے لیا تھا۔ یہ چاہتے ہوئے بھی کہ میں اپنے بچوں کو کوئی ادھورا پن نہ دوں گی۔ چاہے ایک وقت کی روٹی کھاؤں یا معمولی سے مکان میں رہوں۔ بھلے پہننے کو دو جوڑے کم قیمت بھی ہوں تو شکر کروں گی مگر مکمل رفاقت ذہنی اور جسمانی سبھی کچھ انہی پر نثار کر دوں گی پھر کافی دنوں بعد رانی کا فون آ یا اور اس نے بتا یا کہ اسے کینیڈا میں وکالت میں داخلہ مل گیا ہے اور وہ ہوسٹل جا رہی ہے۔

          ’’ اور ابا جان کا کیا ہو گا؟‘‘ میں نے سمجھانے والے انداز میں پو چھا۔

          ’’ وہی جو مجھ سے پہلے ہوتا ہو گا۔ ‘‘اس کے لہجے کی بے پروائی پر میں رات رات بھر انگاروں پر رہی۔ باپ کی خدمت کا خواب جو دن رات میری آنکھوں میں منڈلاتا رہتا تھا، وہ رانی کی قسمت ٹھہرا تھا مگر وہ قدر نہ کر سکی اور شاید یہ میرے باپ کے لیے خدا کی طرف سے سزا تھی جو اس نے ماں جی سے بلا وجہ بے اعتنائی دِکھا کرکی تھی۔ ان کی وفا، حیا ،کسی کی بھی تو قدر نہ کی تھی بلکہ ساری عمر ہر رشتے کو پیسے سے تولتے رہے تھے سو بیٹی اور بیٹے والے ہوتے ہوئے بھی تنہائی کی سزا کاٹ رہے تھے۔ اپنی بوئی ہوئی فصل کاٹتے کاٹتے لہولہان ہوتے ہوں گے مگر کہہ نہیں سکتے۔ بزدل جو ہوئے یا پھر اَنا پرست۔ کاش محبت نے آ پ کے دِل پر دستک دی ہوتی تو آپ نہ تو بزدل ہوتے اور نہ انا پرست اور شاید سزا کے اتنے طویل دور بھی نہ ہوتے۔۔۔ بوڑھے ہو کر سب کچھ کرنا پڑتا ہو گا۔

          سنا ہے کہ باہر کے ملکوں میں نوکر بھی عام طور پر نہیں ملتا۔ سارے کام جنہیں کر کے میں تھک جاتی ہوں ، اپنے ہاتھ سے کیسے کرتے ہوں گے۔ کتنی بار آنکھیں بھیگ جاتیں ، تصور ختم نہ ہوتے تھے۔ نوالے اٹک اٹک کر اُترتے تھے لیکن پاگل پن کا علاج کہیں نہ تھا تاہم اب میں اداکاری کرتے کرتے کریکٹر ایکٹر ہو گئی تھی۔ رحمان کو شبہ ہوتا نہ اسامہ کو۔ سب مگن ،سبھی خوش تھے۔ رانی کے خط سے پتہ لگا کہ سلیم بھائی اس سے ملنے آتے ہیں۔ کبھی کبھی ویک اینڈ پروہ بھی ان کے گھر جاتی تھی۔ بھابی اچھی ہیں مگر بھابی ہیں اس لیے احتیاط کرتی ہوں۔ سلیم بھائی آتے ہیں اور خاموشی سے جس جگہ بیٹھتے ہیں وہیں سے اٹھ کر چلے جاتے ہیں۔نہ کچھ کہتے ہیں ، اور نہ ہنستے ہیں بس چُپ چاپ رہتے ہیں۔ میں بعض وقت گھبرا جاتی ہوں اِدھر اُدھر ہو جاتی ہوں۔ ان کے آ نے سے میں ڈسٹرب ہو جاتی ہوں اس لیے بہانہ بنا کر اکثر ٹال بھی دیتی ہوں۔ یہ سب پڑھ کر میں کتنا روئی تھی۔ یہ رانی کا مزاج کب سے ایسا بے حس ہو گیا تھا۔ بالکل انگریز ہو گئی ہے۔ اپنے پرائے کا فرق ہی نہیں سمجھتی۔ پھر نصیحتوں سے بھرا پانچ صفحات کا خط اسے بھیج ڈالا حالانکہ میں نے اسے وہ سب کرنے کو کہا تھا جو مجھے کرنے کی حسرت تھی ، خواہش تھی۔ خدمت ، جاں نثار ی ، بے لوث پیار میرے اندر سرتا پیر بہتا تھا اور میرا باپ اکیلا ، میرا بھائی تنہا تھے اور میری بہن جس کو شاید ہم سب نے بے حس بنا ڈالا تھا، مزے سے رہ رہی تھی۔ واقعی وہ خوش اور مگن تھی یا سزا دے رہی تھی خود کو۔ میں فیصلہ نہ کر پائی تھی!

          سلیم بھائی کو دیکھے مجھے تیس برس سے بھی زیادہ ہو چکے تھے لیکن وہ روز اول کی طرح مجھے ازبر تھے۔ چھ فٹ تین انچ قد۔ چھریرا بدن۔ سلیقے سے بنے مال۔ جب وہ سفید کرتا پاجامہ پہن کر نکلتے تو ماشاء اللہ کہنا پڑتا۔ وہ اپنے حسن سے لا پرواہ ہو کر بھی بے حد و جیہ اور شکیل تھے۔ جانے اب کیسے ہو گئے ہوں گے۔ یقیناً گریس فل سے ہوں گے۔ بال گرے ہو چکے ہوں گے یا کھچڑی پک رہی ہو گی لیکن پھر بھی اچھے لگتے ہوں گے۔ بچے نہیں ہوئے ، کبھی کبھی غم ہوتا ہو گا۔ بیوی کو بھی بہلاتے ہوں گے۔ یار دوست اتنے پیارے اور ذہین دوست کی دوستی پر نازاں ہوتے ہوں گے۔ کبھی تو نانی اماں ، ماں جی اور میں یاد آ تی ہوں گی۔ دل کرتا ہو گا مجھ سے ملنے کو۔ خاندان کے واحد بچے اسامہ کو دیکھنے کی خواہش ہوتی ہو گی۔ جو ہو بہو اُن کے نقش اور قد لے کر آیا تھا۔ اسے دیکھ کر ایسا لگتا جیسے سلیم بھائی TEEN AGERمیں گھوم رہے ہوں۔ زندگی کو جیسے پہئے سے لگے ہوئے تھے۔ وقت تیزی سے گزر رہا تھا لیکن میں پہروں ، گھنٹوں اپنی دنیا میں گھومتی پھرتی۔ روز صبح ہوتی اور یونہی تانے بانے بُنے جاتے۔ سارے الزام ایک دوسرے پر رکھ کر اور پھر شام تک سزا سے بری بھی کر دیتی، یونہی رات بھی گزر جاتی۔ سب کو ایسے ہی میرے ساتھ رہنے کی عادت سی ہو گئی تھی۔ ایک دن رانی کا فون بے وقت آ گیا۔

          ’’ خیر تو ہے نا!‘‘ میرا دل دھک دھک کر رہا تھا۔

          ’’ہاں ، سلیم بھائی آپ کے پاس رہنے کو آ رہے ہیں۔ ‘‘

          ’’ کیا!‘‘ مجھ پر ایسی کیفیت تھی کہ اگر رحمان مجھے تھام نہ لیتے تو میں شاید گر جاتی۔

          ’’آج یہاں سے روانہ ہو رہے ہیں۔‘‘

          ’’ میری بات کراؤ اُن سے۔‘‘ میرا اشتیاق قابل دید تھا۔

          ’’اب ان سے کوئی بات نہیں کر سکتا باجی!‘‘ رانی کی سسکیاں مجھے وہ سب کچھ بتا رہی تھیں جو میں خواب میں سننا چاہتی تھی۔ بتیس برس بعد میرا بھائی آئے گا۔ جسے میں صرف دیکھ سکوں گی۔ وہ نہ مجھ سے کچھ کہے گا اور نہ میں بتا سکو ں گی اور میں اسے چھو بھی نہ سکو ں گی۔ اس لیے کہ وہ شیشے کے گھر میں آئے گا۔ اس کے جسم اور منہ پر کیمیکل ہو ں گے۔ جو اس نے صرف میرے لیے لگوائے ہیں کہ وہ آخری سفر میرے سامنے کر نا چاہتا ہے۔

          ’’کیوں کی ایسی خواہش انہوں نے ؟‘‘ میں سکتے میں تھی۔

          رحمان مجھے کندھے سے لگائے آہستہ آہستہ بتا رہے تھے کہ سلیم بھائی نے میرا پانچ صفحوں کا خط پڑھ لیا تھا جسے پڑھ کر وہ بہت روئے تھے اور پھر اکثر روتے رہتے تھے۔ بالآخر بیمار پڑ گئے۔ ڈاکٹروں نے کہا کہ کہ سگریٹ نوشی کی کثرت نے انہیں کینسر میں مبتلا کر دیا ہے اور یہ مرض لا علاج ہے۔ جب انہیں پتا چلا تو انہوں نے خواہش ظاہر کی ، وہ وطن جانا چاہتے ہیں۔ آخری وقت وہ میری محبت کی چھاؤں میں گزارنا چاہتے ہیں اور مرنے کے بعد ماں جی کے ساتھ سونا چاہتے ہیں پھر وہ آ گئے اور ہمیشہ کے لیے بچھڑ بھی گئے اور ان سے ملنے کا ، ان کو دیکھنے کا ، ان کے ساتھ رہنے کا خواب ، میری ساری خواہشیں ایک ایک کر کے دفن ہو گئیں۔ میری آنکھوں میں یہ آخری لمحہ ٹھہر گیا تھا۔ اس کے بعد میرا کوئی وہم باقی نہ بچا تھا۔ میرے پاس ایک بھی امید باقی نہ رہی تھی۔ بس یاد تھا تو اتنا، میرا برف جیسا سفید اور سرد بھائی اندر سے بڑا گرم تھا۔ وہ تنہائی کی آ گ میں تپ تپ کر کندن ہو گیا تھا۔ اس نے میرے سارے ملال، سارے دکھ، سارے سارے گلے شکوے ایک چُپ میں چُھپا لیے تھے اور مجھے اپنی محبت کی ذمے داری سے آزاد کر گئے تھے۔مگر اب کی بار اپنوں کی طرح اپنوں کے سامنے ہتھیار ڈال کر زیر کر گئے تھے۔ اپنے ساتھ وہ سب کو واپس لے آئے تھے۔ ابا جان اور رانی پھر واپس نہ جا سکے۔ سارے خزانے تو یہیں دفن تھے۔ ان کی حفاظت بھی تو کرنی تھی۔ صبح سے شام حاضری بھی تو دینی تھی۔ سو یہ ذمے داری ابا جان نے اٹھا لی تھی۔ میں ہر رات پچھلے پہر تک ساری کہانی دہراتی ہوں اور سوچتی ہوں کہ اگر ہم سب ساتھ مل کر رہتے اور دکھ سکھ شیئر کرتے تو کسی کو بھی تنہائی کا کینسر نہ مارتا اور نہ ہی ایک دن میں ایک عمر جی لینے سے تھکن ہوتی۔

-----------------------